IslamQA.org Logo

Permanently attaching porcine and bovine derived material to the body

Answered according to Hanafi Fiqh by Askimam.org

السلام علیکم ورحمتہ اللہ وبركاتہ,

 

دوران عمل جراحی ہرنیہ کے ڈاکٹر حضرات اس جگہ کو جو پھٹ جاتی ہے اس کو سیتے ہیں اور پھر اس پر ایک ” Mesh ” لگا دیتے ہیں. یہ میش اس وجہ سے لگتا ہے کہ دوبارہ ہرنیہ نہ ہوجائے.

 

اب انڑینٹ پر تحقیق کرنے پر پتہ چلا ہے کہ یہ Mesh جو ہے وہ سور یا گائیں کی آنتوں سے یا ان کی کھالوں سے بنایا جاتا ہے.

 

ملاحظہ فرمائیں نیچے دیا ہوا حوالہ جہاں پر صاف لکھا ہے.

 

http://www.fda.gov/MedicalDevices/ProductsandMedicalProcedures/ImplantsandProsthetics/HerniaSurgicalMesh/default.htm

 

Animal-derived mesh are made of animal tissue, such as intestine or skin, that has been processed and disinfected to be suitable for use as an implanted device. These animal-derived mesh are absorbable. The majority of tissue used to produce these mesh implants are from a pig (porcine) or cow (bovine) source.

 

یہ بھی لکھا ہے کہ یہ میش جو ہے وہ اس جگہ جذب بھی ہوجاتا ہے. یعنی اس کا حصہ بن جاتا ہے. یہ بھی لکھا ہے آنتوں یا کھال کو پروسس کرکے میش بنایا جاتا ہے.

 

اب بندہ.کہ مندرجہ بالا دی گی تفصیلات کی روشنی میں مندرجہ ذیل سوالات ہیں. بندہ پر جوابات ارسال فرما کر احسان فرماویں.

 

١. کیا اس کا استعمال میرے لیے جائز ہے. بند کا ایک ہفتے قبل ہی ہرنی کا آپریشن ہوا ہے.اور میش بھی لگایا گیا ہے . بندہ کو نہی معلوم کہ وہ آیا سور کی آنتوں یا گاے کی آنتوں کا بنا ہوا ہے.

ڈاکڑوں کے مطابق ہرنیہ کا علاج صرف آپریشن ہے چاہے ایمرجنسی میں کرنا پڑے یا مریض خود آکر کراے.

 

٢ بندہ کو اپنے آپ سے گھن آرہی ہے بند کیا کرے. آپ حضرات شریعت کی روشنی میں بتائیں.

 

٣ یہ میش اس لیے لگایا جاتا ہے کہ ہرنیہ دوبارہ نہ ہوجائے. اس س قبل کو آپریشن بغیر میش کے ہوتا تھا لوگوں کو دوبارہ ہرنیہ ہوجاتا تھا.

 

4. بندہ کو قبل آپریشن اس چیز کا نہیں پتہ تھا مگر ڈاکڑوں کے مطابق اس کا کروانا ضروری تھا. الحمد مسلمان ملک میں مسلمان ڈاکٹر نے بتایا تھا.

 

 

نوٹ: بندہ اس سوال کو جلدی کی وجہ سے اس طرح ای میل میں بھیج رہا ہے. ان شاءاللہ جیسے آپ حضرات فرمائیں گے ویسے لکھ کر ارسال کردے گا.

Answer

In the Name of Allah, the Most Gracious, the Most Merciful.

As-salāmu ‘alaykum wa-rahmatullāhi wa-barakātuh.

Hernia ke oppression me jo mesh isti’maal kiya jaata he wo do qisam ka hota he:

  1. Ya to masnoo’i (synthetic) hota he. Akthar is qisam ka mesh isti’maal kiya jata.[1] Is soorat me koi mas’ala nahi.
    1. Ya to jaanwar ke khaal yaa aanto se banaaya jaata. Is surat me, agar sakht zaroorat ho aur masnoo’i mesh mawjood na ho, to is ke isti’maal ki gunjayish he.[2]

Aap ki soorat me chunke oppression ho chukka he aur aap ko yaqeenan ma’loom nahi ke kis qisam ka mesh isti’maal kiya gaya he aur ab us ka nikaalna bhi mushkil he, is liye aap is ki fikar na kare.

Jabke kisi bhi baat kaa aap ko yaqeen nahi aur ghaalib gumaan ye he ke masnoo’i mesh aap ke liye isti’mal kiya gaya hoga, to gin mahsoos karne ki koi waja nahi. Is qisam ke khyalaat ki taraf tawajjuh na farmaaye.

 

And Allah Ta’āla Knows Best

Nabeel Valli

Student Darul Iftaa
Lusaka, Zambia

Checked and Approved by,
Mufti Ebrahim Desai.

www.daruliftaa.net


[2]   الأشباه والنظائر (1/251) [إدارة القرآن]

الضرورات تبيح المحظورات

This answer was collected from Askimam.org, which is operated under the supervision of Mufti Ebrahim Desai from South Africa.

Find more answers indexed from: Askimam.org
Read more answers with similar topics:
Search
Related QA

Pin It on Pinterest